Posted: March 4, 2014 in News and Views

 

اِس ناز ۔۔۔۔۔ اِس انداز ۔۔۔۔۔۔ سے تم ہائے چلو ہو روز ایک غزل ہم سے کہلوائے چلو ہو
رکھنا ہے کہیں پائو ۔۔۔۔۔۔ تو رکھو ہو کہیں پائوں چلنا ذرا آیا ہے ۔۔۔۔۔۔ تو اترائے چلو ہو
دیوانہِ گُل قیدی زنجیر ہیں اور تم کیا ٹھاٹ سے گلشن کی ہوا کھائے چلو ہو
مے میں کوئی خامی ہے ۔۔۔۔۔ نہ ساغر میں کوئی کھوٹ پینا نہیں آئے ہے ۔۔۔۔۔ تو چھلکائے چلو ہو
ہم کچھ نہیں کہتے ہیں ۔۔۔۔۔ کوئی کچھ نہیں کہتا تم کیا ہو ۔۔۔۔۔ تمہیں سب سے کہلوائے چلو ہو
زلفوں کی تو فطرت ہی ہے ۔۔۔۔۔ لیکن میرے پیارے زلفوں سے زیادہ تمہیں بل کھائے چلو ہو
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s